انڈیا کبھی ہمارا دوست نہیں بن سکتا – پاکستان زندہ باد

(By: Muhammad Feroz)

نرم دل رکھنے والے تمام مسلمان حضرات یقیناً جانتے ہونگے کہ بھارت مسلمانوں کا اور خاص طور پور پاکستان کا کتنا بڑا دشمن ہے۔۔ اگر بھارت یا اکھنڈ بھارت کے ساتھ ہی مسلمانوں کا گزارہ ہو سکتا تو علامہ اقبال کے خواب کا کیا جواز باقی رہ جاتا؟ قائداعظم نے تمام محنت و مشقت اور جدوجہد کیوں کی ہوتی؟؟ سینکڑوں لیڈران اور کروڑوں مسلمانوں کی جدوجہد کاوش کا کیا مقصد باقی رہ جاتا؟؟ لاکھوں مسلمانوں کا قتلِ عام ہونا بے معنی نہ رہ جاتا؟؟

 

پاکستان اللہ تعالی کی بہت عظیم نعمت ہے اور اس نعمت کی قدر و اہمیت صرف قدردانوں کو ہی ہو سکتی ہے۔۔ اسلام اور پاکستان کے دشمنوں، یہود و ہنود، حاسدین و مفسدین اور دیگر دجّال پرست شیطانوں اور انسانوں اور بھارت کے مہربانوں کو کبھی پاکستان کی حرمت و اہمیت کا احساس ہرگز نہیں ہو سکتا۔۔ یہی لوگ اسلام اور پاکستان کے سب سے زیادہ بڑے دشمن ہیں۔ اس قسم کے تمام لوگوں سے بہت زیدہ محتاط اور ہوشیار رہنے کی اشد ضرورت ہے جو پاکستان کو تنزلی و پستی پر لے جانا چاہتے ہیں۔

 

یاد رکھیئے! ہمارے کچھ پاکستانی جتنی چاہے کوششیں کر لیں لیکن بھارت کبھی اپنی کرتوت سے باز نہیں آئے گا۔ بھارت اتنا زیادہ خطرناک ملک ہے کہ آخری زمانہ کی احادیث میں دجال سے لڑنے والے مسلمانوں اور ہندوستان سے جہاد کرنے والے مسلمانوں کے اجر کے بارے میں بہت سی فضیلتیں بیان ہوئی ہیں اور غزوہ ہند صحیح احادیث سے ثابت ہے۔

 

بھارت کے دجل و منافقت کی صرف ایک مثال یہی کافی ہے کہ جب وہاں ممبئی حملے ہوئے تو پاکستان کے خلاف دن و رات زہر اگلتا ہے جبکہ پاکستان میں بھارت کے ایجنٹس بہت ساری دہشت گردی کی کاروائیوں میں براہ راست ملوث ہیں پھر بھی وہ نہ تو مانتا ہے اور نہ ہی اپنی ہٹ دھرمی سے باز آتا ہے۔۔ ابھی کچھ عرصہ پہلے ہی وہاں مشرقی علاقے گورداسپور میں جو حملہ ہوا کیا اسی حملے کے دوران ہی انڈیا نے الزامات پاکستان پر نہیں لگا دیے تھے؟؟ اور کیا انکے میڈیا نے پاکستان کے خلاف طوفان بدتمیزی نہیں برپا کر دیا تھا؟؟ انڈین میڈیا کیا، وہاں تو زیادہ تر لوگ ہی ایسی واویلیاں کرتے ہیں، اور پھر جب ہمارے ہی کوئی بھولے بھالے دوست کہیں کہ انڈیا کے بارے میں بات کرنا نفرت ہے اور غلط ہے،، تو کیا کہہ سکتا ہوں۔۔ کچھ دن پہلے ہی انکا جاسوس ڈرون جسے تباہ کیا گیا اس سے بڑھ کر کیا ثبوت ہوگا؟؟ مطلب انکی دہشت گردی ثابت شدہ ہو تب بھی ٹھیک،، اور پاکستان اور پاکستانی فوج اور مجاہدین کچھ نہ بھی کریں تب بھی غلط؟؟ واہ رے واہ کیا سوچ ہے۔

 

انڈیا نہ ہمارا دوست تھا نہ ہی کبھی بن سکے گا کیونکہ نبی مکرّم صلی اللہ علیہ وسلم سے زیادہ سچی بات کسی کی نہیں ہو سکتی۔۔ بیشک ادھر کے لوگ جو چاپے کر لیں اور بھارت کی جتنی چاہیں خوشامدیں کر لیں لیکن انکی تمام اس قسم کی حرکتیں بے کار ہی رہیں گی اور بھارت کبھی بھی مسلمانوں اور پاکستان کو نقصان پہنچانے کی سازشوں اور حرکتوں  سے پیچھے نہیں ہٹے گا۔۔ کیا پاکستان کے دریائوں پر بھارت نے بہت سارے ڈیم نہیں بنا لیے؟؟ کیا وہ پاکستان کو ہر محاذ پر بالخصوص زرعی و ثقافتی محاذوں پر بے بس و زچ نہیں کر دینا چاہتا؟؟

 

ایک انتہائی اہم بات دھیان میں رہے کہ الحمداللہ میں اللہ رب العزت کی مخلوق سے محبت کرنے والا ایک گنہگار انسان ہی ہوں۔ میرا ارادہ قطعاً نفرت پھیلانے کا نہیں ہے لیکن جو بات جائز ہے, سچ ہے وہ کرنا بھی میرے لیے اشد ضروری رکھتا ہے سو کرتا ہوں۔ میں تمام ہندئووں کو غلط نہیں کہہ رہا بلکہ بہت سارے ہندو بھی ٹھیک ہیں اور پرامن بھی ہیں لیکن انکی جو اکثریت ہے ہمیں پتہ ہے۔ بھارت کو فتح کرنے والے مسلمانوں کی فضیلت دجال کے خلاف لڑنے والوں جتنی ہی ہے اور اسی سے ثابت ہوتا ہے کہ ہندوستان اسلام کے بدترین دشمن ممالک میں سے ایک ملک ہے۔ وہاں مسلمانوں کے علاوہ سکھوں کے ساتھ جو ہو رہا ہے وہ بھی سب کے علم میں ہیں اور خالصتان کی تحریک دوبارہ شروع بھی ہو چکی ہے۔ پھر وہاں کے عیسائیوں اور دیگر اقلیتوں کا حال بھی کسی سے ڈھکا چھپا نہیں ہے۔ خیر وہاں تو نچلی ذات کے ہندئوں سے بھی جو سلوک ہوتا ہے اللہ پاک معاف کریں۔۔ آپ خود بہت سے اخباری سورس، حوالوں اور ثبوت سے ان سب باتوں خود ہی مشاہدہ کرسکتے سکتے ہیں۔۔ آپ یہ بھی لازمی دیکھیں اور تلاش کریں کہ اسی سال سرحد پر لگ بھگ چار سے پانچ پاکستانی مسلمان فیمیلیز کی عید الفطر بھارت نے خراب کر دی۔۔ اسکے علاوہ بھی حالیہ دنوں میں بھارت اپنی شرپسندی سے باز نہ رہتے ہوئے بہت سے گھروں کو انکے مکینوں سے محروم کر کے سنسان کر گیا اور دیگر مال و مویشیوں کو نقصان پہنچانا ایک الگ کہانی ہے۔

 

باقی رہے بھارت میں رہنے والے مسلمان تو وہاں تازہ ترین رپورٹس کے مطابق ہی ثابت ہوتا ہے کہ وحشی اور خونخوار درندہ صفت ہندئوں نے کئی مسلمانوں کو محض اس شک کی وجہ سے شہید کر دیا کے انھوں نے انکی گائو ماتا (جسکا پیشاب پینا ہندئوں کے وہاں فخر کی علامت ہے) کا گوشت بیچا یا کھایا تھا۔۔

 

اگر کوئی شخص یہ سمجھتا ہے کہ وہاں کے مسلمان بہت خوش اور مطمئین ہیں تو میں اس پر زیادہ بات نہیں کرنا چاہتا بلکہ اسکا فیصلہ آپ سب پر چھوڑتا ہوں تا کہ انصاف سے کام لیتے ہوئے غوروفکر کریں کہ انڈیا میں مسلمانوں کے ساتھ کیا امتیازی و ہتک آمیز سلوک روا رکھا جاتا ہے یا ان پر پھول نچھاور کئے جاتے ہیں؟؟ کیونکہ بچے بچے کو معلوم ہے کہ وہاں گجرات فسادات میں کیا ہوا تھا، اور ہر معاملہ میں وہاں کیا چلتا ہے، سمجھوتہ ایکسپریس میں پاکستانی مسلمانوں کے ساتھ جو ہوا تھا وہ بھی سب جانتے ہیں۔ بابری مسجد کے سانحے کو کون بھول سکتا ہے؟؟

 

کچھ لوگ سمجھتے ہیں کہ غزوہ ہند والی باتیں نفرتیں پھیلانے کے مترادف ہے، لیکن یہ سوچ صرف ناواقف اور انجان لوگوں کی ذاتی سوچ ہے جو کہ بلاشبہ اسلام اور اسلامی تعلیمات سے دور رہنے اور اجنبی رہنے کا ہی نتیجہ ہے۔ ہمارے دلوں میں بھی کسی کیلیے نفرتیں یا کینہ نہیں ہیں لیکن حق اور سچ بات کرنا بھی لازم ہے جسے نفرت سے تعبیر کرنا ہرگز صحیح نہیں۔۔ بہرحال احادیث اور بالخصوص آخری زمانے والی اہم ترین احادیث کوئی نفرتیں پھیلانے کا باعث نہیں بلکہ اگر مسلمان انھی سے رہنمائی لیں تو بہت سے معاملات کے بارے میں بہتر طریقے سے آگاہ رہ سکتے ہیں۔ کچھ ایسے بھی لوگ  ہیں جو کہتے ہیں بھارت پر بات کرنے کا فائدہ نہیں اور وہاں کے مسلمانوں کا ٹھیکہ پاکستان نے نہیں لیا ہوا۔۔ پاکستان پہلے اپنے مسلمانوں اور لوگوں کا تو حال صحیح کر لے اور سسٹم سدھارے۔۔ ایسی باتوں سے بھی پاکستان کے لیے ایک مخصوص بو اور نفرت کی واضح جھلک دکھائی دیتی ہے۔۔ ایسے مہربانوں کو اتنا بتانا چاہتا ہوں کہ دنیا کے تمام مسلمان ایک جسم کی مانند ہیں۔۔ ایک دوسرے کے لیے ہمدردی کے جذبات رکھنا عین اسلام ہے۔ رہا پاکستان کا موجودہ معاملہ تو یہاں کی زیادہ تر خرابیاں اسلامی سسٹم کے نہ ہونے کی وجہ سے ہیں کیونکہ اسلامی نظام سے ہر چیز میں بہتری آ تی ہے۔

 

جہاں تک بات ہے پاکستانی حکمرانوں کی بات ہے تو انکا تو اللہ ہی حافظ یے اور انھوں نے سیدھرنا بھی نہیں ہے۔۔ اور پھر ایسے حکمرانوں کے ساتھ جڑی ہوئی مفاد اور موقع پرست عوام کا جو حال ہے وہ بھی سب جانتے ہیں۔۔ مسئلہ ان لوگوں کے لیے بنا ہوا ہے جو سمجھدار اور سلجھے ہوئے ہیں لیکن وہ پھنس گئے ہیں۔ اب وہ کریں تو کیا کریں؟؟ اگر یہاں بہتر نظام اور طریقے لاگو ہو جائیں تو بہت سے مسائل معاملات خود بخود ہی بہت بہتر اور صحیح ہو جائیں گے۔

 

نبی مکرم صلی اللہ علیہ وسلم آخری نبی ہیں۔۔ سب سے بڑھ کر صادق اور سچے ہیں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث بھی برحق رہیں گی، کسی کے انکار کی وجہ سے وہ احادیث ہرگز غلط نہیں ہو سکتیں،، ان شاء اللہ یہ (غزوہ ہند) اور باقی سب معاملات ہو کر رہیں گے اور صحیح معنوں میں دنیا سے فتنہ پھیلانے والی قوتوں کا خاتمہ ہوگا۔

 

میری باتیں معقول، برحق اور جائز ہیں یا نہیں، بہت سے لوگ سمجھ سکتے ہیں۔ میں اپنے آرٹیکلز، مضامین میں جو بھی لکھتا ہوں اور کہتا ہوں وہ تحقیق اور احادیث کے مطالعہ کرنے کے بعد ہی کہتا ہوں،، اپنے پاس سے بنا بنا کر نہیں کرتا۔ مجھے یقین ہے اور مجھے یقین ہے کہ ان شاء اللہ اللہ پاک میرے مضامین اور آرٹیکلز میں دیے گئے مواد کی حقانیت کو دنیا کے سامنے لاتے رہیں گے۔ میرا میرے اللہ پاک پر یہی یقین ہے۔۔ ویسے بھی اللہ پاک پر بندے کا گمان بہت اچھا ہونا چاہیے۔

 

اللہ پاک ہمیں اسلام، مسلمانوں اور پاکستان سے سچی محبت کرنے کی توفیق عطاء کریں ،، اسلام و پاکستان کے ازلی دشمنوں کی سازشوں و چالاکیوں کو سمجھنے اور ان سے محتاط رہنے کی فراست عطاء کر یں ،، ہمیں دین و دنیا کی بھلائیوں اور کامیابیوں سے نوازیں اور پاکستان کو ہر قسم کے دشمنوں سے محفوظ فرمائیں۔ آمین

Share this page:

0 Comments

Write a Comment

Your email address will not be published.
Required fields are marked *